سپریم کورٹ نے پائلٹس کی ڈگریوں سے متعلق کیس نمٹادیاخواجہ صاحب کوہم بلاتے نہیں یہ کیوں آتے ہیں ادائیگیوں سے متعلق کیس نیب کو بھجوا دیتے ہیں’ہیلتھ کیئرکمیشن کوایک ماہ میں رپورٹ پیش کرنے کا حکم

سپریم کورٹ نے پائلٹس کی ڈگریوں سے متعلق کیس نمٹادیا
اسلام آباد؛سپریم کورٹ آف پاکستان نے پائلٹس اورکیبن کریوکی ڈگریوں سے متعلق کیس نمٹادیا۔بدھ کو چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے پائلٹس اورکیبن کریوکی ڈگریوں سے متعلق کیس کی سماعت کی۔سول ایوی ایشن کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ تمام ڈگریوں کی تصدیق کی جاچکی ہے ،16پائلٹس اور65 کیبن کریوکی ڈگریاں جعلی نکلیں جن کے لائسنس معطل کردیئے،بیرون ملک موجود 6 افراد کی ڈگریوں کی تصدیق رہتی ہے۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ عدالتی حکم پرعجلت کا مظاہرہ کرنے کا تاثر ہے ،عدالت کسی کے رزق پرقدغن نہیں لگانا چاہتے اور معطل لائسنس کا ریکارڈ درست ہونا چاہئے۔وکیل سول ایوی ایشن نے لائسنس معطل ہونے والے پائلٹس کیپاس اپیل کے حق ہونے کا بتایا۔ایک متاثرہ پائلٹ نے ڈگری اصلی ہونے کے باوجود لائسنس معطل ہونے کا مؤقف اپنایا تو چیف جسٹس نے متعلقہ فورم سے رجوع کرنے کی ہدایت کردی۔سپریم کورٹ نے جعلی ڈگریوں کے حامل 16پائلٹس اور65 کیبن کریوکے لائسنس معطل کئے جانے پرکیس نمٹا دیا۔

خواجہ صاحب کوہم بلاتے نہیں یہ کیوں آتے ہیں؟چیف جسٹس
اسلام آباد؛چیف جسٹس آف پاکستان ثاقب نثار نے ریلوے خسارہ کیس میں ریمارکس دیئے ہیں کہ خواجہ صاحب کوہم بلاتے نہیں یہ کیوں آتے ہیں؟ہم نے توآڈیٹرجنرل سے جواب مانگاتھا۔بدھ کو چیف جسٹس آف پاکستان میں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3رکنی بینچ نے ریلوے خسارہ کیس کی سماعت کی،اس موقع پرسابق وفاقی وزیرخواجہ سعد رفیق عدالت میں پیش ہوئے۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ خواجہ سعد رفیق کو عدالت نے طلب نہیں کیا تو یہ کیوں آتے ہیں؟ ،عدالت نے آڈیٹرجنرل سے جواب مانگا تھا۔خواجہ سعد رفیق کے وکیل کامران مرتضیٰ ایڈووکیٹ نے بتایاکہ اٹارنی جنرل نے لاہور رجسٹری میں جواب جمع کرایا ہے۔جس پر چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیئیکہ آئندہ ہفتے جواب آجائے توکیس سنیں گے۔بعدازاں سپریم کورٹ نے ریلوے خسارہ کیس کی سماعت آئندہ ہفتے تک ملتوی کردی۔خواجہ سعد رفیق نے صحافیوں سے گفتگونے کہاکہ پاکستان سے پیاریاجمہوریت کی بات کرنے والوں کے ساتھ ایسا ہی سلوک ہوگا ملک بنانے والوں کی اولاد کوجیل جانا کی رویت ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت ملک چلانے کے بجائے اپوزیشن بھگانے کے چکرمیں ہے پہلے گرفتاری پھرثبوت ڈھونڈے جا رہے ہیں بلکہ گھڑے جارہے ہیں۔سعد رفیق نیمزید کہاکہ جمہوریت کی بات کرنے والے کوغدارکہا جاتا ہے سیاستدانوں کو ایک دوسرے کو چور چور کہنے کے بجائے اصل ایشوزپربات کرنا ہوگی۔

‘آئی پی پیز کو زائد ادائیگیوں سے متعلق کیس نیب کو بھجوا دیتے ہیں’
اسلام آباد؛سپریم کورٹ نے آئی پی پیز کو زائد ادائیگیوں سے متعلق کیس میں وزیر توانائی عمر ایوب کو طلب کر لیا۔ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے کہ آئی پی پیز کو زائد ادائیگیوں سے متعلق کیس نیب کو بھجوا دیتے ہیں، عوام کو بجلی نہیں ملی، پیسے دیئے جاتے رہے، یہ لوگ ڈارلنگز تھے، اربوں کا سرکلر ڈیٹ بن گیا۔آئی پی پیز کو زائد ادائیگیوں سے متعلق کیس کی سپریم کورٹ میں سماعت ہوئی۔ آئی پی پیز کے نمائندے سپریم کورٹ میں پیش ہوئے۔ وکیل پاور کمپنی نے کہا این پی سی سی ڈیمانڈ بتاتی ہے، این پی سی سی بتاتی ہے تو آئی پی پی ایس بجلی بناتی ہیں۔ چیف جسٹس نے کہا آئی پی پی ایس کے ساتھ معاہدے ہمارے گلے کا پھندہ بنے ہوئے ہیں، پتہ نہیں اس وقت کون لوگ تھے جنہوں نے معاہدے کئے۔سیکرٹری پاور نے عدالت کو بتایا کہ این پی سی سی سستے فیول سے چلنے والے پلانٹس کو ترجیح دیتی ہے۔ چیف جسٹس نے کہا مجھے اس کیس کو سمجھنے کر ضرورت ہے۔ جس پر سیکرٹری پاور نے کہا ہم پریزنٹیشن دیں گے۔ چیف جسٹس نے کہا آپ نے ایک پریزینٹیشن بنا کر رکھی ہوگی وہ ہی وزیراعظم کو دیتے ہوں گے۔
سپریم کورٹ:نایاب عمرانی کے خاندان کے قتل سے متعلق کیس نمٹا دیا
اسلام آباد؛سپریم کورٹ آف پاکستان نے نایاب عمرانی کے خاندان کے قتل سے متعلق کیس نمٹا دیا۔بدھ کو چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3رکنی بینچ نے نایاب عمرانی کے خاندان کے قتل سے متعلق کیس کی سماعت کی۔سندھ پولیس نے عدالت کو بتایا کہ قتل کے ملزمان گرفتارکرلئے گئے ہیں جبکہ ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل نے بھی عدالت کو بتایاکہ بلوچستان سے 2 ملزمان گرفتارکر لئے گئے ہیں۔سندھ پولیس نے کہا کہ مرکزی ملزم شفقت بھی گرفتارہوچکاہے،نایاب عمرانی نے کہا کہ میرے سارے خاندان کو مار دیا گیا۔چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ نایاب کی مددکرنی تھی کافی حدتک ہوگئی،اب یہ معاملہ پولیس دیکھے گی، آپ کو پولیس کا تحفظ ملا ہوا ہے۔نایاب عمرانی نے کہا کہ میں سندھ نہیں جاسکتی میرا مقدمہ پنجاب منتقل کریں،جس پرچیف جسٹس نے کہا کہ ہم معاملہ نمٹارہے ہیں۔نایاب عمرانی نے کہا کہ سندھ میں ہمیں تحفظ نہیں مل سکتا،عدالت نے نایاب عمرانی کے اہلخانہ کے قتل سے متعلق کیس نمٹادیا۔
سپریم کورٹ کا ہیلتھ کیئرکمیشن کوایک ماہ میں رپورٹ پیش کرنے کا حکم
اسلام آباد؛سپریم کورٹ آف پاکستان نے نجی اسپتالوں میں سہولیات کے فقدان سے متعلق کیس میں ہیلتھ کیئر کمیشن کو ایک ماہ میں رپورٹ پیش کرنے کا حکم دے دیا۔بدھ کو چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3رکنی بینچ نے نجی اسپتالوں میں سہولیات کے فقدان سے متعلق کیس کی سماعت کی۔چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ عدالت نے معاملے پرتحقیق کیلئے ہیلتھ کمیٹی قائم کی تھی،کمیٹی کی رپورٹ آگئی ہے؟وکیل اے جے رحیم نے بتایا کہ رپورٹ ابھی تیاری کے مراحل میں ہے۔سی ای او ہیلتھ کمیشن نے کہا کہ پنجاب میں 60 ہزارنجی اسپتال اورڈسپنسریاں ہیں جس پرجسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ نجی اسپتالوں کیلئے ریگولیشنزبنائیں، ریگولیشنزبننے سے اسپتال کو درست کرنے کیلئے قانونی قوت آجائے گی،کل پنجاب ہیلتھ کیئرکمیشن نوٹیفائی ہوگیاہے۔جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ پھرتوکمیٹی کاکام ختم ہوگیا،عدالت نے کہا کہ ہیلتھ کیئرکمیشن اس معاملے کودیکھے،سپریم کورٹ کاایک ماہ میں رپورٹ پیش کرنیکاحکم دے دیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں